ضِلع جھنگ

صوبہ پنجاب کے عین وسط میں واقع محبت کی سرزمین ضِلع جھنگ، بِہ لحاظ رقبہ فیصل آباد ڈویژن کا سب سے بڑا ضِلع ہے جو 6،353 مربع کلومیٹر پر مُحیط ہے۔

جھنگ، ساندل بار کا اہم ضِلع ہے جس کی آبادی تقریباً 28 لاکھ نفوس پر مشتمل ہے۔ جھنگ صوبہ پنجاب کا وہ واحد ضِلع ہے جس میں تینوں دوآبے یعنی رچنا دوآبہ، چج دوآبہ اور سندھ ساگر دوآبہ شامل ہیں۔ 2009 میں چنیوٹ (جو جھنگ کی تحصیل تھی) کے ضِلع بننے سے پہلے ”کِرانہ ہِلز” کا کُچھ حِصہ بھی ضلع جھنگ میں شامل تھا۔


ہیر سیال کا ضِلع جھنگ، مشرق میں فیصل آباد اور ٹوبہ ٹیک سنگھ، مغرب میں خوشاب، بھکر اور لیہ، شمال میں چنیوٹ اور سرگودھا جب کہ جنوب میں خانیوال اور مُظفرگڑھ کے اضلاع سے گِھرا ہوا ہے۔ 9 ضِلعوں سے مُتصل یہ ضِلع، شورکوٹ کینٹ سمیت اٹھارہ ہزاری، شور کوٹ، احمد پور سیال اور جھنگ کی چار تحصیلوں اور بے شمار مشہور قصبوں پر مُشتمل ہے۔

جھنگ پاکستان کے قدیم ترین اضلاع میں شمار ہوتا ہے۔ زمانہ قدیم میں اس ضلع کا علاقہ ساندل بار کہلاتا تھا۔ بار، مقامی زبان کا لفظ ہے، جس کے معنی گھنے جنگلات کے ہیں جہاں نہری نظام دست یاب نہیں ہوتا۔ یہ بار ساندل کے نام کی وجہ سے “ساندل بار” کہلانے لگا۔ ساندل پنجاب کے ہیرو ”دُلا بھٹی” کے دادا کا نام تھا۔ لوگ دریا کنارے چھوٹی چھوٹی بستیوں میں رہتے تھے جنہیں ”جھوک” کہتے ہیں۔ 1974 میں محکمۂ آثارِ قدیمہ کی شائع کی گئی ایک رپورٹ کے مطابق جھنگ شہر اس وقت سے آباد ہے جب یہاں ”چندر گْپت موریا” کی حکومت تھی۔ کہا جاتا ہے کہ سکندرِاعظم سمندر کی طرف جاتے ہوئے اس علاقے کے کسی حِصے سے گزرا تھا۔ اسی طرح جھنگ کی تحصیل شورکوٹ کے آثارِقدیمہ سے ملنے والے قدیم سِکوں پر ایک طرف گوتم بدھ اور دوسری طرف اشوک کی تصویر بنی ہے۔ یعنی جھنگ شہر اشوک سے بھی پہلے آباد تھا جو چندر گپت موریا کا پوتا تھا۔

اس علاقے کا پہلا مُفصل ذِکر 1526 میں لکھی گئی شہنشاہ بابر کی کتاب ”تُزکِ بابری” میں ملتا ہے، جس کے مطابق بھیرہ، خوشاب اور چناب کے آس پاس کے علاقوں کی حکومت سید علی خان کے پاس تھی۔ بابر نے اپنی کتاب میں خوشاب، بھیرہ اور چناب کی جن ریاستوں کا ذِکر کیا ہے، تاریخ دانوں کے لیے اس زمانے میں ان ریاستوں کا حدود اربع اور محلِ وقوع وغیرہ کا پتا لگانا ایک معما ہے۔ بابر کے حملے سے لے کر محمد شاہ کے دور تک تقریباً دو صدیاں، یہ علاقے غیرمعروف اور گم نامی کی گرد میں دبے رہے۔ مغلوں سے پہلے اس علاقے پر الگ الگ مہاجر قومیں اور آباد کار حکم رانی کرتے رہے جن میں سیال، لالی، ہرل، بھٹی اور داب شامل ہیں۔

ایک اور روایت کے مطابق جھنگ شہر کو 1288 میں رائے سیال نے اپنے مرشد حضرت جلال شاہ بُخاری سُرخ پوش کے کہنے پر آباد کیا تھا۔ 1334 میں مشہور سیاح ابنِ بطوطہ کا یہاں سے گُزر ہوا تھا۔ جھنگ کا پہلا باقاعدہ سیال حکم راں “مل خان” تھا جس نے 1460 میں حکم رانی قائم کی۔ اس کے بعد 360 سال تک مُختلف سیال حکم راں آتے جاتے رہے۔ ان حکم رانوں نے جھنگ کے ساتھ دیگر نزدیکی علاقوں کو شامل کر کے اسے بہت وسعت دی۔ یہاں تک کہ سرگودھا، فیصل آباد اور ٹوبے تک کا علاقہ جھنگ میں شامل ہو گیا۔ جھنگ کے آخری سیال حکم راں احمد خان تھے جنہوں نے 1812 سے 1822تک یہاں حکومت کی۔ احمد خان کے بعد حکومت سکھوں کے قبضے میں چلی گئی۔

جنہوں نے ملتان پر قبضہ کرکے اس علاقے کو بھی فتح کرلیا۔ 1848 میں سکھوں کو شکست ہوئی اور جھنگ کا علاقہ انگریز سرکار کے زیرِاثر چلا گیا اور 1849 میں جھنگ کو ضلع بنا دیا گیا جو اپنے دور کا بہت بڑا ضلع تھا۔ اس سے آگے جھنگ کے بٹوارے شروع ہوئے۔ 1851 میں بڑے پیمانے پر کافی دیہات ضلع ملتان میں شامل کیے گئے۔ پھر 1854 میں جھنگ تحصیل کا تعلقہ”فروکہ” تب کے ضلع شاہ پور (اب سرگودھا) میں شامل کر دیا گیا۔

1861 کے ابتدائی ایام میں اس علاقے کے زخموں پر مرہم رکھنے کے لیے ضلع شاہ پور سے ”کلووال” اور ضلع مظفرگڑھ سے ”گڑھ مہاراجا” اور آس پاس کے دیہات کاٹ کر جھنگ میں شامل کر دییے گئے اور اسی سال شور کوٹ کو تحصیل کا درجہ ملا۔ پھر 1890 میں ضلع جھنگ کی حدود کا ازسرِنو تعین کیا گیا جس میں لیہ کو جھنگ سے علیحدہ کرکے ضلع مظفر گڑھ اور حیدرآباد (آج کے ضلع بھکر کا ایک علاقہ)کو ضلع میانوالی میں شامل کیا گیا۔ پنڈی بھٹیاں کا علاقہ ضلع گوجرانوالہ کا حِصہ بنا دیا گیا۔ 1886 میں لائل پور تحصیل کو ضلع جھنگ کا حصہ بنا دیا گیا۔ 1900 میں سمندری اور ٹوبہ ٹیک سنگھ کو تحصیل کا درجہ دیا گیا اور 1904 میں لائل پور کو علیحدہ ضلع بنا دیا گیا۔

اسی سال میں کِرانہ بار کا تقریباً تمام حصہ تحصیل چنیوٹ سے ضلع شاہ پور کو منتقل کر دیا گیا۔ 1913 میں تحصیل ٹوبہ ٹیک سنگھ کے32 بڑے دیہات جھنگ کی تحصیل شورکوٹ میں شامل کر دیئے گئے۔ 1947 میں آزادی کے بعد ضلع جھنگ کو چنیوٹ، احمد پور سیال اور شور کوٹ تحصیلوں کے ساتھ اسی طرح رکھا گیا۔ 2009 میں جب تحصیل چنیوٹ کو کاٹ کر پنجاب کا 36 واں ضلع بنایا گیا تو چنیوٹ کی جگہ اٹھارہ ہزاری کو جھنگ کی چوتھی تحصیل بنایا گیا۔ یہ ضلع پہلے ملتان پھر سرگودھا اور اب فیصل آباد ڈویژن کا حِصہ ہے۔

طبعی خدوخال کے لحاظ سے دیکھا جائے تو ضلع جھنگ کا تقریباً تمام علاقہ میدانی ہے، ماسوائے مغرب کے جہاں تھل کا صحرائی علاقہ واقع ہے جو دریائے جہلم کے کنارے سے شروع ہوتا ہوا خوشاب ، لیہ اور بھکر کے اضلاع تک جاتا ہے۔ اس علاقے میں ماضی میں جنگلات تھے اور یہ علاقہ کسی بھی قسم کی کاشت کے لیے موزوں نہیں تھا۔ انگریزی دورحکومت میں یہاں نہری نظام بنا کر پورے علاقے کو قابلِ کاشت بنایا گیا۔

ضلع جھنگ ہی وہ جگہ ہے جہاں اٹھارہ ہزاری کے قریب پاکستان کے دو بڑے دریاؤں چناب اور جہلم کا ملاپ ہوتا ہے۔ جھنگ شہر سے 25 کلومیٹر دور 1939 میں دریائے چناب پر تریموں بیراج بنا کر ”رنگ پور کینال” اور ”تریموں سدھنائی لنک کینال” نکالی گئیں۔ رنگ پور جھنگ سمیت ضلع مظفر گڑھ کو بھی سیراب کرتی ہے۔ جھنگ کے غیر زرعی رقبے پر نایاب جنگلات اور جھاڑیوں پائی جاتی ہیں ان میں بوہڑ، ہرمل، کیکر، جھنڈ اور وان شامل ہیں۔

اس ضلع کی آب و ہوا گرم مرطوب ہے۔ گرمیوں میں درجہ حرارت 28 سے 43 جبکہ سردیوں میں 6 سے 27 ڈگری سینٹی گریڈ کے درمیان رہتا ہے۔ اوسطاً سالانہ بارش 288 ملی میٹر ہے۔ آندھیاں اور طوفان بھی شدت سے آتے ہیں۔ نہری پانی کے بہترین نظام اور بارشوں کی بدولت یہاں کئی اقسام کی زرعی اجناس اگائی جاتی ہیں جن میں گندم، کپاس، گنا، چاول، چنے، جوار، تُرش پھل، آم، سرسوں اور تمباکو شامل ہیں۔ یہاں موجود اہم صنعتوں میں روئی بیلنے، اونی کپڑا بنانے، چینی کے کارخانے، برتن بنانے، کمبل بنانے اور کھیس و دریاں بنانے کی صنعت شامل ہے۔ حویلی بہادر شاہ کے مقام پر ایک پاور پلانٹ لگایا گیا ہے جہاں گیس سے بجلی پیدا کی جاتی ہے۔

بُودوباش کے حوالے سے یہ علاقہ بہت رنگین ہے۔ ثقافتی میلے، شادی کی دل چسپ رسومات، مختلف روایتی کھیل اور عرس وغیرہ جھنگ کی پہچان ہیں۔ اسی علاقے سے ہیر رانجھا اور مرزا صاحباں جیسی رومانوی داستانوں نے جنم لیا۔ پنجاب کی چار لازوال محبت کی داستانوں میں سے دو نے اس دھرتی پر جنم لیا اور جھنگ کو محبت اور پیار کی دھرتی کے روپ میں امر کر دیا۔